Corona virus jab

Corona virus jab

Anis Staff asked 2 weeks ago

A question about the coronavirus vaccine and the answer from Sayyed Ahmed Alhasan pbuh

English

Q: Many of the brothers from several different countries are asking me whether they should take the corona vaccine, especially those working in health centers because they are required to take the vaccine. What is your advice regarding this topic?

~~~

العربية

سؤال عن لقاح فايروس كورونا وجواب السيد احمد الحسن ع عليه
س/ كثير من الاخوة ومن عدة دول يسالوني عن اخذ لقاح كورونا خصوصاً وان بعضهم يعمل في دائرة صحية او غيرها فيكون ملزم بأخذه، فما هي نصيحتكم حول هذا الموضوع؟
واثق الحسيني.
~~~

اردو

سوال: بسم اللہ الرحمٰن الرحیم ہمارے بہت سے برادران نے کئی ممالک سے میرے لیے آئے یہ سوال ارسال کیا ہے ہے کہ کیا ان کو کرونا ویکسین لگوانی چاہیے یا نہیں خصوصا وہ جو صحت کے مراکز جس میں کام کرنے والے ہیں؟

1 Answers
Anis Staff answered 2 weeks ago

English

A: May God welcome you.
Sheikh Nadhem asked me about this a long time ago and I responded. In general, vaccination is not a religious or jurisprudence matter. Rather, it is advice. Whoever has an effective and safe vaccine available should rely upon God and have himself and his family vaccinated.
There are many safe vaccines, like Pfizer and Moderna, and the Chinese vaccine is also fine. There are vaccines with very small or even rare potential for harm like AstraZeneca but if a person has access to the alternative, it is better. If an alternate vaccine is not available and the person is exposed to some degree or might possibly contract the virus, it is better to vaccinate whether using AstraZeneca or another [similar] vaccine.
Side effects of the vaccine or drugs in general for this pandemic or others is expected and anticipated. However, it is not right for those who should take the vaccine to refrain from treatment or vaccination based on the argument of potential harm to one in a million; he is already in a situation of greater potential harm.
Ahmed Alhasan
May 3, 2021
21st Ramadan 1442

Original post

~~~

العربية

ج/ حياك الله
سألني شيخ ناظم قبل فترة طويلة واجبته.
عموما اخذ اللقاح ليست مسألة شرعية او دينية ولكن كنصيحة : من يتوفر له لقاح فعال وآمن بمستوى جيد فليتوكل على الله ويلقح نفسه وعائلته.
وهناك لقاحات كثيرة آمنة مثل لقاح شركة فايزر ، ولقاح مودرنا، ايضا اللقاح الصيني لا بأس به، فقط هناك لقاحات فيها ضرر باحتمال قليل جدا أو حتى نادر مثل لقاح استرا زنيكا، فمن يجد البديل لها فاكيد البديل افضل.
ومن لا يجد بديل وهو في موضع يحتمل اصابته بالوباء بقدر معتد به فالافضل أن يلقح سواء باسترازنيكا او غيره.
أيضا مسألة الاعراض الجانبية للقاح او الدواء عموما سواء لهذا الوباء او غيره مسألة محتملة وواردة فمن غير الصحيح للمضطر الامتناع عن العلاج او اللقاح بحجة احتمال واحد بالمليون ان يكون هنا ضرر ، لأنه فعليا واقع في إحتمال ضرر أكبر.
أحمد الحسن
21 رمضان 1442
~~~

اردو

جواب

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ خدا آپ سب کو طولِ عمر عطا فرمائے۔ شیخ ناظم نے نے کافی پہلے مجھ سے یہ سوال کیا تھا اور ہم اس کا جواب دے چکے ہیں کہ ویکسین لگوانا خود کوئی مذہبی بی یا فقہی معاملہ نہیں ہے پھر بھی ہماری نصیحت صحت اور رائے یہ ہے کہ جس کو بھی کوئی موثر اور محفوظ ویکسین میسر ہو تو وہ اللہ پر توکل کرتے ہوئے خود کو اور اپنے گھر والوں کو ویکسین لگوا لے

بہت سی قابل اعتماد اور محفوظ ویکسینز دستیاب ہیں ہیں جیسا کہ کہ Pfizer اور Moderna اس کے علاوہ وہ چائنا کی بنائی گئی ویکسین بھی اچھی ہے. ایسی کئی ویکسینز بھی ہیں جو کہ نہایت کم یا بالکل نہ ہونے کے برابر مضر و نقصان دہ اثرات رکھتی ہیں جیسا کہ AstraZeneca لیکن اگر کسی کے پاس اس کا مناسب متبادل موجود ہو تو زیادہ بہتر ہے ہے
اگر متبادل ویکسین میسر نہ ہو ہو یا کسی انسان کو وائرس میں مبتلا ہونے کا کا خطرہ موجود ہو ہو تو اس کو چاہیے کہ یہی یا اس جیسی کوئی دوسری ویکسین لگوا لے۔
کرونا وائرس سے مربوط دواؤں اور ویکسینز کے سائیڈ ایفیکٹ یعنی مضراثرات واقع ہونے کا امکان اور احتمال بہرحال موجود ہے لیکن دسیوں لاکھ میں سے ایک انسان پر مضر اثرات واقع ہونے کے احتمال مال کی بنیاد پہ وائرس کے خطرے سے دوچار افراد کے لیے ویکسین نہ لگوانا یا علاج نہ کروانا درست عمل نہیں ہے کیونکہ وہ پہلے ہی سے وائرس لاحق ہونے کے خطرے کی زد میں ہیں

احمد الحسن
21 رمضان 1442

Skip to toolbar