Supplications

On this page we have listed the following types of supplication:

  1. Encouraged by Imam Ahmed Al Hasan (as) through his literature or directly from his Facebook
  2. Narrated from the Ahlulbayt (pbut)
  3. First hand from Ansar* who have received instructions via dreams or a visions

The Shariah is only what has come from 1 & 2, however, we still share 3 with you because Imam Ahmed (as) has encouraged the sharing of visions and dreams so that the wider Ansari community also benefits and learns from these encounters.

*We have kept the names of the Ansar anonymous to protect their identities

ImageTitleWriterContentCategorieswriter_hfiltercategories_hfilter
دعاء زمن الغيبة

دعاء زمن الغيبة

رُوي بسند معتبر أنَّ الشيخ أبا عمرو النَّائِب الأوَّل من نوَّاب إمام العصر صَلَوات الله عليه أملى هذا الدُّعاء على أبي محمد بن همام وَأَمَره أن يدعو به، وقد ذكر الدُّعاء السيد ابن طاووس في كتاب جمال الأسبوع بعد ذكره الدَّعوات الواردة بعد فريضة
معتبر سند کے ساتھ یا مروی ہے کہ ابو عمرو جو امام عصر (صلوات اللہ علیہ) کے نواب میں سے پہلے نائب تھے انہوں نے یہ دعاء ابو محمد بن ھمام سے لکھوائی اور کہا کہ وہ اس دعا کے ساتھ دعا کیا کریں، اور اسے سید ابن طاووس نے اپنی کتاب “جمال الاسبوع” میں بھی ذکر کیا ہے
~

اَللّٰھُمَّ عَرِّفْنِی نَفْسَکَ فَإنَّکَ إنْ لَمْ تُعَرِّفْنِی نَفْسَکَ لَمْ أَعْرِفْ رَسُولَکَ۔

اے معبود مجھ کو اپنی ذات کی معرفت کرا کہ یقینا اگر تو نے مجھے اپنی معرفت نہ کرائی تو میں تیرے رسول (ص) کو نہ پہچان سکوں گا

اَللّٰھُمَّ عَرِّفْنِی رَسُولَکَ فَإنَّکَ إنْ لَمْ تُعَرِّفْنِی رَسُولَکَ لَمْ أَعْرِفْ حُجَّتَکَ۔

اے معبود مجھے اپنے رسول(ص) کی معرفت کرا کہ یقینا اگر تو نے مجھے اپنے رسول (ص) کی معرفت نہ کرائی تو میں تیری حجت کو نہ پہچان پاؤں گا

اَللّٰھُمَّ عَرِّفْنِی حُجَّتَکَ فَإنَّکَ إنْ لَمْ تُعَرِّفْنِی حُجَّتَکَ ضَلَلْتُ عَنْ دِینِی۔

اے معبود مجھے اپنی حجت (ع)کی معرفت کرا یقینا اگر تو نے مجھے اپنی حجت کی معرفت نہ کرائی تو میں دین سے بھٹک جاؤں گا

اَللّٰھُمَّ لاَ تُمِتْنِی مِیْتَۃً جاھِلِیَّۃً وَلاَ تُزِغْ قَلْبِی بَعْدَ إذْ ھَدَیْتَنِی۔

اے معبود مجھے جاہلیت کی موت نہ دے اور میرے دل کو ٹیڑھا نہ ہونے دے جب کہ تو نے مجھے ہدایت دی

اَللّٰھُمَّ فَکَما ھَدَیْتَنِی لِوِلایَۃِ مَنْ فَرَضْتَ عَلَیَّ طاعَتَہُ مِنْ وِلایَۃِ وُلاۃِ أَمْرِک بَعْدَ رَسُولِکَ صَلَواتُکَ عَلَیْہِ وَ آلِہِ

اے معبود جیسے تو نے مجھے ان کی ولایت سے آگاہ کیا جن کی پیروی مجھ پر واجب کی ہے انکی ولایت جو تیرے رسول(ص) کے بعد تیرے والیان امر(ع) ہیں تیری رحمتیں ہوں ان پر اور ان کی آل(ع) پر

حَتَّی والَیْتُ وُلاۃَ أَمْرِکَ أَمِیرَ الْمُؤْمِنِینَ عَلِیَّ بْنَ أَبِی طالِبٍ وَ الْحَسَنَ وَالْحُسَیْنَ وَعَلِیّاً وَمُحَمَّداً وَ جَعْفَراً وَمُوسَی وَ وَعَلِيّاً وَمُحَمَّداً وَعَلِيّاً وَالْحَسَنَ وَالْحُجَّةَ الْقائِمَ الْمَهْدِيَّ صَلَواتُكَ عَلَيْهِمْ أَجْمَعِينَ

یہ اس لیے کیا کہ میں تیرے والیان امر (ع)کی ولایت قبول کروں اور وہ ہیں امیر المومنین علی (ع) بن ابی طالب (ع)اور حسن (ع)،حسین (ع) ، علی(ع)، محمد(ع)، جعفر(ع)، موسیٰ(ع)، علی(ع)، محمد(ع)، علی(ع)، حسن(ع) اور حجۃ القائم مہدی ہادی(ع) ان سب پر تیری رحمتیں ہوں

اللّٰهُمَّ فَثَبِّتْنِي عَلَىٰ دِينِكَ، وَاسْتَعْمِلْنِي بِطاعَتِكَ، وَلَيِّنْ قَلْبِي لِوَلِيِّ أَمْرِكَ؛ وَعافِنِي مِمَّا امْتَحَنْتَ بِهِ خَلْقَكَ، وَثَبِّتْنِي عَلَىٰ طاعَةِ وَلِيِّ أَمْرِكَ الَّذِي سَتَرْتَهُ عَنْ خَلْقِكَ، وَبِإِذْنِكَ غابَ عَنْ بَرِيَّتِكَ، وَأَمْرَكَ يَنْتَظِرُ،

اے معبود مجھے اپنے دین پر ثابت وقائم رکھ مجھے اپنی اطاعت میں لگا دے اپنے ولی امر(ع) کیلئے میرے دل کو نرم کردے مجھے اس چیز سے بچا کہ جس سے تو اپنی مخلوق کو آزماتا ہے مجھے اپنی ولی امر(ع)کی پیروی پر قائم رکھ جسے تو نے اپنی مخلوق سے پوشیدہ کردیا اسے اپنے حکم سے خلق کی نگاہوں سے اوجھل کیا اور وہ تیرے فرمان کا منتظر ہے

وَأَنْتَ الْعالِمُ غَيْرُ الْمُعَلَّمِ بِالْوَقْتِ الَّذِي فِيهِ صَلاحُ أَمْرِ وَلِيِّكَ فِي الْإِذْنِ لَهُ بِإِظْهارِ أَمْرِهِ، وَكَشْفِ سِتْرِهِ، فَصَبِّرْنِي عَلَىٰ ذٰلِكَ حَتَّىٰ لَاأُحِبَّ تَعْجِيلَ مَا أَخَّرْتَ وَلَا تَأْخِيرَ مَا عَجَّلْتَ، وَلَا كَشْفَ مَا سَتَرْتَ، وَلَا الْبَحْثَ عَمَّا كَتَمْتَ،

اور تو بغیر بتانے والے کے اس وقت کو جانتا ہے جس میں تیرے ولی امر(ع) کیلئے بہتری ہے کہ تو اسے اپنے امر کو ظاہر کرنے کا حکم دے اسے پردے سے باہر لائے پس مجھے اس معاملے میں صبر عطا فرماتا کہ جس کام میں تو دیر کرے میں جلدی نہ کروں اور جس میں تو جلدی کرے اس میں دیر نہ کروں جسے تو پوشدہ رکھے اسے ظاہر نہ کروں اورجسے تو چھپائے اس کا ذکر نہ کروں

وَلَا أُنازِعَكَ فِي تَدْبِيرِكَ، وَلَا أَقُولَ لِمَ وَكَيْفَ وَما بالُ وَلِيِّ الْأَمْرِ لَايَظْهَرُ وَقَدِ امْتَلَأَتِ الْأَرْضُ مِنَ الْجَوْرِ وَأُفَوِّضُ أُمُورِي كُلَّها إِلَيْكَ

تیرے طریق کار میں تکرار نہ کروں اور کیوں اور کیسے کا سوال نہ کروں کہ کیوں ولی امر(ع) ظہور نہیں فرماتے جب کہ زمین ظلم وجور سے بھری ہوئی ہے بلکہ میں اپنے تمام امور تیرے سپرد کردوں

اللّٰهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ أَنْ تُرِيَنِي وَلِيَّ أَمْرِكَ ظاهِراً نافِذَ الْأَمْرِ، مَعَ عِلْمِي بِأَنَّ لَكَ السُّلْطانَ وَالْقُدْرَةَ وَالْبُرْهانَ وَالْحُجَّةَ وَالْمَشِيَّةَ وَالْحَوْلَ وَالْقُوَّةَ، فَافْعَلْ ذٰلِكَ بِي وَبِجَمِيعِ الْمُؤْمِنِينَ

اے معبود تجھ سے سوال ہے کہ اپنے ولی امر(ع) کا دیدار کرا ظاہر بظاہرجب اس کا حکم جاری ہو اور مجھے اس کاعلم ہو کیونکہ تو ہی ہے اختیار وقوت والا اور تو مالک ہے دلیل حجت ارادے حرکت اور قوت کا پس ایسا ہی کر میرے لیے اور تمام مومنوں کیلئے

حَتَّىٰ نَنْظُرَ إِلَىٰ وَلِيِّ أَمْرِكَ صَلَواتُكَ عَلَيْهِ؛ ظاهِرَ الْمَقالَةِ، واضِحَ الدَّلالَةِ، هادِياً مِنَ الضَّلالَةِ، شافِياً مِنَ الْجَهالَةِ، أَبْرِزْ يَا رَبِّ مُشاهَدَتَهُ، وَثَبِّتْ قَواعِدَهُ، وَاجْعَلْنا مِمَّنْ تَقَِرُّ عَيْنُهُ بِرُؤْيَتِهِ، وَأَقِمْنا بِخِدْمَتِهِ، وَتَوَفَّنا عَلَىٰ مِلَّتِهِ، وَاحْشُرْنا فِي زُمْرَتِهِ.

تاکہ ہم ولی امر(ع) کو اپنی آنکھوں سے دیکھیں تیری رحمتیں ہوں اس پر جب وہ ظاہراً گفتگو کرے روشن دلائل دے گمراہی سے نکالے اورجہالت سے بچائے اے پروردگار اس کا کھلا دیدار کرا ان کے قانون کو محکم بنااور ہمیں ان لوگوں میں قرار دے جن کی آنکھیں ان کے دیدار سے ٹھنڈی ہوں ہمیں ان کی خدمت میں کمر بستہ رکھ ہمیں ان کے دین پر موت دے اور ہمیں ان کے گروہ میں محشور فرما

اللّٰهُمَّ أَعِذْهُ مِنْ شَرِّ جَمِيعِ مَا خَلَقْتَ وَذَرَأْتَ وَبَرَأْتَ وَأَنْشَأْتَ وَصَوَّرْتَ، وَاحْفَظْهُ مِنْ بَيْنِ يَدَيْهِ وَمِنْ خَلْفِهِ وَعَنْ يَمِينِهِ وَعَنْ شِمالِهِ وَمِنْ فَوْقِهِ وَمِنْ تَحْتِهِ بِحِفْظِكَ الَّذِي لَايَضِيعُ مَنْ حَفِظْتَهُ بِهِ، وَاحْفَظْ فِيهِ رَسُولَكَ، وَوَصِيَّ رَسُولِكَ عَلَيْهِ وَآلِهِ السَّلامُ،

اے معبود امام(ع) کو ہر چیز کے شر سے بچا جو تو نے پیدا فرمائی جسے رواں کیا جسے برآمد کیا جسے ایجاد کیا اور جسے صورت دی ہے اور امام(ع) کی حفاظت کر سامنے سے پیچھے سے اس کے دائیں سے اس کے بائیں سے اس کے اوپر سے اور اس کے پاؤں کے نیچے سے اپنی حفاظت کے ساتھ کہ جس کی تو حفاظت کرے وہ ضائع نہیں ہوتا امام(ع) کی ذات میں اپنے رسول (ص) اور اپنے رسول (ص) کے وصی کی حفاظت فرما ان پر اور ان کی آل (ع)پر

اللّٰهُمَّ وَمُدَّ فِي عُمْرِهِ، وَزِدْ فِي أَجَلِهِ، وَأَعِنْهُ عَلَىٰ مَا وَلَّيْتَهُ وَاسْتَرْعَيْتَهُ، وَزِدْ فِي كَرامَتِكَ لَهُ فَإِنَّهُ الْهادِي الْمَهْدِيُّ، وَالْقائِمُ الْمُهْتَدِي وَالطَّاهِرُ التَّقِيُّ، الزَّكِيُّ النَّقِيُّ، الرَّضِيُّ الْمَرْضِيُّ، الصَّابِرُ الشَّكُورُ الْمُجْتَهِدُ

سلام اے معبود امام عصر(ع) کی عمر دراز کر ان کے عہد کو طول دے اس کی مدد کر اس کام میں جس کیلئے اسے والی وحاکم بنایا ہے اور اس پر اپنی مہربانیوں میں اضافہ کر کہ بے شک وہ رہبرہے، راہ یافتہ ،قائم(ع)، ہدایت پایا ہوا، پاکیزہ ہے ،باتقویٰ پاک شدہ ہے، باصفا ، راضی ہے، راضی کیا ہوا، صبر والا ہے، شکر گزار اور کوشش کرنے والا

اللّٰهُمَّ وَلَا تَسْلُبْنَا الْيَقِينَ لِطُولِ الْأَمَدِ فِي غَيْبَتِهِ وَانْقِطاعِ خَبَرِهِ عَنَّا، وَلَا تُنْسِنا ذِكْرَهُ وَانْتِظارَهُ، وَالْإِيمانَ بِهِ، وَقُوَّةَ الْيَقِينِ فِي ظُهُورِهِ، وَالدُّعاءَ لَهُ وَالصَّلاةَ عَلَيْهِ، حَتَّىٰ لَايُقَنِّطَنا طُولُ غَيْبَتِهِ مِنْ قِيامِهِ،

اے معبود امام(ع) پر ہمارا یقین زائل نہ ہو اس کی غیبت کی مدت طول پکڑنے اور ہم تک اس کی خبر نہ آنے کی وجہ سے ہم بھول نہ جائیں اس کا ذکر اس کا انتظار اور اس پر ایمان رکھنا اس کے ظہور پر ہمارا یقین محکم رہے ہم اس کیلئے دعا کریں اور اس پر درود بھیجیں تا کہ ہم ان کے طول غیبت کے باعث ان کے قیام سے مایوس نہ ہوں

وَيَكُونَ يَقِينُنا فِي ذٰلِكَ كَيَقِينِنا فِي قِيامِ رَسُولِكَ صَلَواتُكَ عَلَيْهِ وَآلِهِ، وَمَا جاءَ بِهِ مِنْ وَحْيِكَ وَتَنْزِيلِكَ، فَقَوِّ قُلُوبَنا عَلَى الْإِيمانِ بِهِ، حَتَّىٰ تَسْلُكَ عَلَىٰ يَدَيْهِ مِنْهاجَ الْهُدَىٰ وَالْمَحَجَّةَ الْعُظْمَىٰ، وَالطَّرِيقَةَ الْوُسْطَىٰ، وَقَوِّنا عَلَىٰ طاعَتِهِ، وَثَبِّتْنا عَلَىٰ مُتابَعَتِهِ،

اور اس پر ہمارا یقین ایسا ہی ہو جیسے تیرے رسول(ص) کے قیام پر یقین ہے اور اس کلام پر بھی جو تیری وحی و تنزیل کے ذریعے ان پر اترا ہے تیرا ان پر اور ان کی آل (ع)پر درود و سلام ہو پس ہمارے دلوں کو امام (ع)پر ایمان میں محکم کر دے تاکہ تم ہمیں ان کے ذریعے سے راہ ہدایت پر رواں کرے، کشادہ تر شاہراہ پر اور درمیانی راستے پر نیز ہمیں امام (ع) کی . پیروی کی ہمت دے اور اس کے نقش قدم پر قائم رکھ

وَاجْعَلْنا فِي حِزْبِهِ وَأَعْوانِهِ وَأَنْصارِهِ وَالرَّاضِينَ بِفِعْلِهِ، وَلَا تَسْلُبْنا ذٰلِكَ فِي حَيَاتِنا وَلَا عِنْدَ وَفاتِنا، حَتَّىٰ تَتَوَفَّانا وَنَحْنُ عَلَىٰ ذٰلِكَ، لَاشاكِّينَ وَلَا ناكِثِينَ وَلَا مُرْتابِينَ وَلَا مُكَذِّبِينَ

اور ہمیں اس کے گروہ میں قرار دے اور اس کے ساتھیوں میں ،اس کے مددگاروں میں اور اس کے فعل کو پسند کرنے والوں میں قرار دے اور یہ عقیدہ ہم سے نہ چھوٹے ہماری زندگی میں اور نہ ہماری موت کے وقت یہاں تک کہ تو ہمیں وفات دے اور ہم اسی عقیدے پر ہوں نہ اس میں شک لائیں نہ عہد کو توڑیں نہ اس میں آمیزش کریں اور نہ ہی جھٹلائیں

اللّٰهُمَّ عَجِّلْ فَرَجَهُ وَأَيِّدْهُ بِالنَّصْرِ، وَانْصُرْ ناصِرِيهِ، وَاخْذُلْ خاذِلِيهِ، وَدَمْدِمْ عَلَىٰ مَنْ نَصَبَ لَهُ وَكَذَّبَ بِهِ، وَأَظْهِرْ بِهِ الْحَقَّ، وَأَمِتْ بِهِ الْجَوْرَ، وَاسْتَنْقِذْ بِهِ عِبادَكَ الْمُؤْمِنِينَ مِنَ الذُّلِّ، وَانْعَشْ بِهِ الْبِلادَ، وَاقْتُلْ بِهِ جَبابِرَةَ الْكُفْرِ، وَاقْصِمْ بِهِ رُؤُوسَ الضَّلالَةِ، وَذَلِّلْ بِهِ الْجَبَّارِينَ وَالْكافِرِينَ

اے معبود ! امام(ع) کی جلد کشائش فرما مدد دے کر اس کوطاقتوربنا اس کے دوستوں کی مدد فرما اسے چھوڑ جانے والوں کو چھوڑ دے عذاب بھیج اس پر جو اس سے دشمنی کرے اور اسے جھٹلائے اس کے ہاتھوں حق کو ظاہر کر اس کے ذریعے ظلم کو مٹا دے اور اس کے وسیلے سے اپنے باایمان بندوں کو ذلت اور پستی سے نجات دلا اور شہروں کو آباد کر اس کی تلوار سے کفر کے سرداروں کو قتل کرا اور گمراہی کے سالاروں کا زور توڑ دے امام(ع) کے ہاتھوں سرکشوں اور کافروں کو ذلت دے

وَأَبِرْ بِهِ الْمُنافِقِينَ وَالنَّاكِثِينَ وَجَمِيعَ الُمخالِفِينَ وَالْمُلْحِدِينَ فِي مَشارِقِ الْأَرْضِ وَمَغارِبِها، وَبَرِّها وَبَحْرِها، وَسَهْلِها وَجَبَلِها، حَتَّىٰ لَاتَدَعَ مِنْهُمْ دَيَّاراً، وَلَا تُبْقِيَ لَهُمْ آثاراً، طَهِّرْ مِنْهُمْ بِلادَكَ، وَاشْفِ مِنْهُمْ صُدُورَ عِبادِكَ، وَجَدِّدْ بِهِ مَا امْتَحىٰ مِنْ دِينِكَ

اس کے ذریعے منافقوں کی جڑ کاٹ دے عہد شکنوں کی اور تمام مخالفوں اور بے دینوں کی بیخ کنی کر جو موجود ہیں زمین کے مشرقی اور مغربی علاقوں میں میدانوں میں سمندروں میں جنگلوںاور پہاڑوں میں یہاں تک کہ ان کی کوئی بستی نہ رہنے دے اور ان کا نشان تک نہ چھوڑ یعنی اپنے شہروں کو ان سے پاک کر اور ان کی نابودی سے اپنے بندوں کے دل ٹھنڈے کردے امام(ع) کے ذریعے اس چیز کو زندہ کر جو تیرے دین میں سے مٹ گئی

وَأَصْلِحْ بِهِ مَا بُدِّلَ مِنْ حُكْمِكَ وَغُيِّرَ مِنْ سُنَّتِكَ، حَتَّىٰ يَعُودَ دِينُكَ بِهِ وَعَلَىٰ يَدَيْهِ غَضّاً جَدِيداً صَحِيحاً لَاعِوَجَ فِيهِ، وَلَا بِدْعَةَ مَعَهُ، حَتَّىٰ تُطْفِئَ بِعَدْلِهِ نِيرانَ الْكافِرِينَ

اور درستی کر اس کی جو تیرے حکم اور تیرے طریقے میں سے رد وبدل ہوا ہے یہاں تک کہ امام(ع) کے ذریعے تیرا دین پلٹ آئے اور وہ تازہ و درست و صحیح ہو جائے کہ جس میں نہ کوئی کجی ہو اور نہ کوئی بدعت ہو یہاں تک کہ تو امام(ع) کے ہاتھوں کافروں کی بھڑکائی ہو ئی آگ بجھا دے

فَإِنَّهُ عَبْدُكَ الَّذِي اسْتَخْلَصْتَهُ لِنَفْسِكَ، وَارْتَضَيْتَهُ لِنَصْرِ دِينِكَ، وَاصْطَفَيْتَهُ بِعِلْمِكَ، وَعَصَمْتَهُ مِنَ الذُّنُوبِ، وَبَرَّأْتَهُ مِنَ الْعُيُوبِ، وَأَطْلَعْتَهُ عَلَى الْغُيُوبِ، وَأَنْعَمْتَ عَلَيْهِ، وَطَهَّرْتَهُ مِنَ الرِّجْسِ، وَنَقَّيْتَهُ مِنَ الدَّنَسِ

کیونکہ وہ تیرا ایسا بندہ ہے کہ جس کو تو نے اپنے لئے خاص اور مخصوص کیا ہے اسے اپنے دین کی نصرت کے لئے پسند کیا اور اپنے علوم دے کر برگزیدہ بنایا تو نے اس کو گناہوں سے محفوظ کیا نقائص سے پاک و صاف رکھا اور اپنے رازوں سے مطلع کیا تو نے اس پر انعام کیا پلیدی کو اس سے دور رکھا اور آلودگی سے پاک فرمایا

اللّٰهُمَّ فَصَلِّ عَلَيْهِ وَعَلَىٰ آبائِهِ الْأَئِمَّةِ الطَّاهِرِينَ، وَعَلَىٰ شِيعَتِهِ الْمُنْتَجَبِينَ، وَبَلِّغْهُمْ مِنْ آمالِهِمْ مَا يَأْمُلُونَ، وَاجْعَلْ ذٰلِكَ مِنَّا خالِصاً مِنْ كُلِّ شَكٍّ وَشُبْهَةٍ وَرِياءٍ وَسُمْعَةٍ، حَتَّىٰ لَانُرِيدَ بِهِ غَيْرَكَ، وَلَا نَطْلُبَ بِهِ إِلّا وَجْهَكَ؛

پس اے معبود! اس پر اور اس کے بزرگان پاک ائمہ (ع)پر رحمت بھیج اس کے پاک دل شیعوں پر رحمت کر اور ان کی وہ آرزوئیں پوری کر جو وہ رکھتے ہیں ہماری اس دعا کو پاک و خالص رکھ ہر طرح کے شک وآمیزیش اور دکھاوے اور شہرت طلبی سے یہاں کہ ہم صرف تجھی کو مانیں اور اس میں تیرے سوا کسی کا تصور نہ کریں

اللّٰهُمَّ إِنَّا نَشْكُو إِلَيْكَ فَقْدَ نَبِيِّنا، وَغَيْبَةَ إِمامِنا، وَشِدَّةَ الزَّمانِ عَلَيْنا، وَوُقُوعَ الْفِتَنِ بِنا، وَتَظاهُرَ الْأَعْداءِ عَلَيْنا، وَكَثْرَةَ عَدُوِّنا، وَقِلَّةَ عَدَدِنا.

اے معبود! ہم تجھ سے فریاد کرتے ہیں کہ ہمارا پیغمبر(ص)ہو گزرا ہمارا امام(ع) پوشیدہ ہے زمانہ ہم پر سختیاں کر رہا ہے فتنوں نے گھیر رکھا ہے اور دشمن ہم پر حاوی ہوئے جاتے ہیں جب کہ ہمارے دشمن زیادہ اور دوست کم ہیں

اللّٰهُمَّ فَافْرُجْ ذٰلِكَ عَنَّا بِفَتْحٍ مِنْكَ تُعَجِّلُهُ ، وَنَصْرٍ مِنْكَ تُعِزُّهُ، وَ إِمامِ عَدْلٍ تُظْهِرُهُ، إِلٰهَ الْحَقِّ آمِينَ

پس اے معبود! ہماری یہ مصیبتیں دور فرما اپنی طرف سے فتح کے ساتھ اس میں جلدی کر اپنی مدد سے اسے غلبہ دے اور امام (ع)عادل کو ظاہر فرما اے سچے معبود ایسا ہی ہو

اللّٰهُمَّ إِنَّا نَسْأَلُكَ أَنْ تَأْذَنَ لِوَلِيِّكَ فِي إِظْهارِ عَدْلِكَ فِي عِبادِكَ، وَقَتْلِ أَعْدائِكَ فِي بِلادِكَ، حَتَّىٰ لَا تَدَعَ لِلْجَوْرِ يَا رَبِّ دِعامَةً إِلّا قَصَمْتَها، وَلَا بَقِيَّةً إِلّا أَفْنَيْتَها، وَلَا قُوَّةً إِلّا أَوْهَنْتَها، وَلَا رُكْناً إِلّا هَدَمْتَهُ، وَلَا حَدّاً إِلّا فَلَلْتَهُ، وَلَا سِلاحاً إِلّا أَكْلَلْتَهُ، وَلَا رايَةً إِلّا نَكَّسْتَها، وَلَا شُجاعاً إِلّا قَتَلْتَهُ، وَلَا جَيْشاً إِلّا خَذَلْتَهُ،

اے معبود! ہم تجھ سے عرض کرتے ہیں کہ تو اپنے ولی (ع)کو اجازت دے تاکہ وہ تیرے بندوں میں اصول ِعدل کو رائج کرے اور تیرے شہروں میں جو لوگ تیرے دشمن ہیں ان کو قتل کرے تاکہ اے پروردگا رتو کسی ستم کرنے والے کو نہ چھوڑے مگر یہ کہ اس کی کمر توڑ دے نہ کوئی باقی رہے مگر تو اسے نابود کردے کوئی طاقتور نہ ہو مگر تو اسے پست کردے کوئی عمارت نہ ہو مگر تو اسے ویران کردے کوئی تلوار نہ ہو مگر تو اسے ناکارہ بنادے کوئی ہتھیار نہ ہو مگر تو اسے بیکار کردے کوئی جھنڈانہ ہو مگر تو اسے گرا دے کوئی بہادر نہ ہو مگر تو اسے قتل کردے کوئی لشکر نہ ہو ،مگر تو اسے تباہ کردے

وَارْمِهِمْ يَا رَبِّ بِحَجَرِكَ الدَّامِغِ، وَاضْرِبْهُمْ بِسَيْفِكَ الْقاطِعِ وَبَأْسِكَ الَّذِي لَاتَرُدُّهُ عَنِ الْقَوْمِ الْمُجْرِمِينَ، وَعَذِّبْ أَعْداءَكَ وَأَعْداءَ وَلِيِّكَ وَأَعْداءَ رَسُولِكَ صَلَواتُكَ عَلَيْهِ وَآلِهِ بِيَدِ وَلِيِّكَ وَأَيْدِي عِبادِكَ الْمُؤْمِنِينَ

اور اے پروردگار اپنی قدر ت سے ان پر بڑے بڑے پتھر برسا ان لوگوں کو اپنی کاٹ دھار تلوار سے مار اور ان کی سخت گرفت کر کہ جس سے کوئی بدکار گروہ بچ نہیں سکتا پروردگار اپنے دشمنوں کو اور اپنے ولی اور اپنے رسول(ص) ﴿تیرا درود ہو ان پر اور ان کی آل پر ﴾ کے دشمنوں کو اپنے ولی (ع)اور مومن بندوں کے ہاتھوں سخت عذاب دے

اللّٰهُمَّ اكْفِ وَلِيَّكَ وَحُجَّتَكَ فِي أَرْضِكَ هَوْلَ عَدُوِّهِ، وَكَيْدَ مَنْ أَرادَهُ، وَامْكُرْ بِمَنْ مَكَرَ بِهِ، وَاجْعَلْ دائِرَةَ السَّوْءِ عَلَىٰ مَنْ أَرادَ بِهِ سُوءاً، وَاقْطَعْ عَنْهُ مادَّتَهُمْ،

اے معبود! اپنے ولی حفاظت فرما اور اپنی حجت(ع) کی حفاظت فرما روئے زمین پر دشمنوں کے خوف اور فریب کاروں کے فریب سے اور دھوکا دینے والوں کو دھوکے میں رکھ جو اس سے بدی کا ارادہ کرے اس کو بدیوں میں پھنسا دے امام(ع) کے ذریعے انہیں اپنے مرکز سے جدا کردے

وَأَرْعِبْ لَهُ قُلُوبَهُمْ، وَزَلْزِلْ أَقْدامَهُمْ، وَخُذْهُمْ جَهْرَةً وَبَغْتَةً، وَشَدِّدْ عَلَيْهِمْ عَذابَكَ، وَأَخْزِهِمْ فِي عِبادِكَ، وَالْعَنْهُمْ فِي بِلادِكَ، وَأَسْكِنْهُمْ أَسْفَلَ نارِكَ،

اس کا رعب ان کے دلوںپر جمادے ان کے قدم اکھیڑ دے ان کو بیچ میدان اچانک پکڑ اور ان کو سخت ترین عذاب دے ان کو اپنے بندوں کے روبرو رسوا کر ان کے شہروں میں ان پر لعنت بھیج ان کو دوزخ کے نچلے طبقے میں ڈال

وَأَحِطْ بِهِمْ أَشَدَّ عَذابِكَ، وَأَصْلِهِمْ ناراً، وَاحْشُ قُبُورَ مَوْتاهُمْ ناراً، وَأَصْلِهِمْ حَرَّ نارِكَ، فَإِنَّهُمْ أَضاعُوا الصَّلاةَ، وَاتَّبَعُوا الشَّهَواتِ، وَأَضَلُّوا عِبادَكَ، وَأَخْرَبُوا بِلادَكَ

ان پر سخت عذاب مسلط کر دے ان کو آگ میں پھینک دے ان کے مردوں کی قبریں آگ سے بھر دے کہ آگ کے شعلے ان کو جلائیں کیونکہ انہوں نے نماز کی پروا نہ کی خواہشوں کے پیچھے چلتے رہے تیرے بندوں کو بھٹکاتے پھرتے اور تیرے شہروں کو اجاڑتے رہے

اللّٰهُمَّ وَأَحْيِ بِوَلِيِّكَ الْقُرْآنَ، وَأَرِنا نُورَهُ سَرْمَداً لَالَيْلَ فِيهِ، وَأَحْيِ بِهِ الْقُلُوبَ الْمَيِّتَةَ؛ وَاشْفِ بِهِ الصُّدُورَ الْوَغِرَةَ، وَاجْمَعْ بِهِ الْأَهْواءَ الْمُخْتَلِفَةَ عَلَى الْحَقِّ، وَأَقِمْ بِهِ الْحُدُودَ الْمُعَطَّلَةَ وَالْأَحْكامَ الْمُهْمَلَةَ،

اور اے معبود اپنے ولی (ع) کے ذریعے قرآن کو زندہ کر امام (ع)کے دائمی نور کا دیدار کرا کہ پھر وہ اوجھل نہ ہو اس کے ذریعے بے نور دلوں کو زندہ کر اس سے دلوں میں بھرے کینے کو دور فرما امام کی برکت سے مختلف آراء کو حق پر متفق کردے اس کے ہاتھوں ترک شدہ حدیں قائم فرمااور بھولے ہوئے احکام نافذ کرادے

حَتَّىٰ لَايَبْقىٰ حَقٌّ إِلّا ظَهَرَ، وَلَا عَدْلٌ إِلّا زَهَرَ، وَاجْعَلْنا يَا رَبِّ مِنْ أَعْوانِهِ، وَمُقَوِّيَةِ سُلْطانِهِ، وَالْمُؤْتَمِرِينَ لِأَمْرِهِ، وَالرَّاضِينَ بِفِعْلِهِ، وَالْمُسَلِّمِينَ لِأَحْكامِهِ، وَمِمَّنْ لَاحاجَةَ بِهِ إِلَى التَّقِيَّةِ مِنْ خَلْقِكَ،

یہاں تک کہ ہر حق ظاہر ہوجائے اور ہر عادلانہ حکم عیاں ہو کر رہے اور اے پروردگار ہمیں اس کے ساتھیوں اس کی حکومت کو محکم کرنے والوں اس کے حکم پر عمل کرنے والوں اس کے فعل پر راضی ہونے والوں اس کے احکام کو تسلیم کرنے والوں میں قرار دے اور ان لوگوں میں قرار دے جن کو مخلوق کے سامنے تقیہ کی حاجت نہیں

وَأَنْتَ يَا رَبِّ الَّذِي تَكْشِفُ الضُّرَّ،وَتُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذا دَعاكَ، وَتُنْجِي مِنَ الْكَرْبِ الْعَظِيمِ، فَاكْشِفْ الضُّرَّ عَنْ وَلِيِّكَ، وَاجْعَلْهُ خَلِيفَةً فِي أَرْضِكَ كَما ضَمِنْتَ لَهُ

اور اے پروردگار وہ تو ہی ہے جو سختی دور کرتا ہے اور بے چارے کی دعا قبول کرتا ہے جب وہ تجھے پکارے اور اسے بہت بڑی مصیبت سے نجات دیتا ہے پس اپنے ولی سے سختی دور فرما اور اس کو زمین میں اپنا خلیفہ قرار دے جیسے تو نے اس کا ذمہ لیا ہے

اللّٰهُمَّ لَاتَجْعَلْنِي مِنْ خُصَماءِ آلِ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِمُ السَّلامُ، وَلَا تَجْعَلْنِي مِنْ أَعْداءِ آلِ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِمُ السَّلامُ، وَلَا تَجَعَلْنِي مِنْ أَهْلِ الْحَنَقِ وَالْغَيْظِ عَلَىٰ آلِ مُحَمَّدٍ عَلَيْهِمُ السَّلامُ، فَإِنِّي أَعُوذُبِكَ مِنْ ذٰلِكَ فَأَعِذْنِي، وَأَسْتَجِيرُ بِكَ فَأَجِرْنِي.

اے معبود! مجھے آل محمد کے مخالفوں میں سے قرار نہ د ے مجھے آل محمد علیہم السلام کے دشمنوں میں سے قرار نہ دے اور مجھے آل محمد علیہم السلام کے ساتھ کینہ رکھنے اور ان پر غصہ کرنے والوں میں سے قرار نہ دے پس میں ان باتوں سے تیری پناہ لیتا ہوں مجھے پناہ دے اور تیرے نزدیک ہوا ہوں مجھے نزدیک کر لے۔

اللّٰهُمَّ صَلِّ عَلَىٰ مُحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَاجْعَلْنِي بِهِمْ فائِزاً عِنْدَكَ فِي الدُّنْيا وَالْآخِرَةِ، وَمِنَ الْمُقَرَّبِينَ، آمِينَ رَبَّ الْعالَمِينَ

پس میں محمد(ص) و آل محمد(ص) پر درود بھیج اور ان کے واسطے سے مجھے اپنے ہاں کامیاب بنا دے دنیا اور آخرت میں اور اپنے نزدیکیوں میں رکھ ایسا ہی ہو اے جہانوں کے پروردگار

Self-correctionunknownself-correction
دُعَاءٌ لِلتَّأْدِيْبِ/ Dua for self-discipline

اَللَّهُمَّ أَدِّبْنِيْ نَفْسِيْ وَأَحْسِنْ تِأْدِيْبِيْ

…أحد الأنصار رآي السيد أحمد الحسين عليه السلام في الرؤيا يأمره هكذا

(أدع بدعاء الإمام السجاد عليه السلام (اَللَّهُمَّ أَدِّبْنِيْ نَفْسِيْ وَأَحْسِنْ تِأْدِيْبِيْ

(تقريبا سنة 2014)

~ ~ ~

Transliteration:

Allahumma addibnee nafsee wa ahsin ta’deebee

~ ~ ~

One of the Ansar saw Syed Ahmed Al Hasan (as) in a dream telling him to supplicate with these words…

“Oh Allah give me self-discipline and do it in the best possible way.”

(Circa 2014)

~ ~ ~

اے اللہ میرے نفس کو با ادب بنادے اور اسے خوب اچھے طریقے سے ادب سکھادے

یہ دعاء کسی انصاری نے امام احمد الحسن ع کو خواب میں کہتے ہوئے سنا تھا کہ یہ دعاء امام سجاد علی ابن الحسین کی دعاء تھی اور اس انصاری کو پڑھ لیناچاہئے

(سنہ 2014)

‍~ ~ ~

हे परमेश्वर! मुझे आत्म-अनुशासन प्रदान कीजिये और इसे सर्वोत्तम संभव ढंग से कर दीजिए।

Self-correctionself-correction
دُعَاءٌ لِحَلِّ الْمَشَاكِل / Dua for resolution of problems

(إذا تصاب بمشاكل فقل: يَا اَلله , يَا مُحَمَّد , يَا عَلِيّ , يَا يَمَانِي وتحل المشاكل)

أحد الأنصار رأى رسول الله ص في المنام والرسول أخذه بيده وأمره بهذه الكلمات وأن يدعو بها

(سنة 2015 تقريبا)

~ ~ ~

Transliteration:

Ya Allah, Ya Muhammad, Ya Ali, Ya Yamaani (then pray for whatever help you need)

~ ~ ~

“When you face problems then say this: Oh Allah, Oh Muhammad, Oh Ali, Oh Yamani and the problems will be solved”

One Ansari saw the Muhammad the Messenger of Allah pbuhahf in a dream and the Messenger held his hand and told him to pray with these words

(Circa the year 2015)

~ ~ ~

جب آپ کسی مسئلے کا سامنا کر ہے ہوں اور مدد چاہئے تو یہ کہ کر دعاء کرو اور مسئلہ حل ہو جائے گا: يَا اَلله , يَا مُحَمَّد , يَا عَلِيّ , يَا يَمَانِي

کسی انصاری کو اللہ کے رسول محمد ص کی خواب میں زیارت ہوئی اور رسولِ خدا نے ان کا ہاتھ پکڑ کر اوپر لکھا ہوئا جملہ فرمایا تھا

(سنہ 2015)

~ ~ ~

जब भी आपके सम्मुख समस्याएं हों (जब भी आप समस्याओं का सामना करें ) तब यह कहें : हे अल्लाह  (हे परमेश्वर) , हे मुहम्मद, हे अली, हे यमानी , और समस्या का समाधान हो जायेगा।

Helphelp
دعاء للرزق / Dua for sustenance

حسبنا الله, سيؤتينا الله من فضله, إنا إلى الله لراغبون

(من رؤيا أنصاري الذي رأى السيد أحمد الحسين عليه السلام يأمره بهذا الدعاء

( نفمبر5  2020 / 16 ربيع الأول 1433) 

~ ~ ~

Transliteration:

Hasbuna-llah, sayu’teena-llahu min faDlih, innaa ila-llahi la-raghiboon

~ ~ ~

Allah is enough for us, Allah will soon give us from his bounty, we desire for Allah

(From the dream of an Ansari who saw Syed Ahmed Al Hasan telling him to read this dua)

(Dated 5th November 2020 / 16 Rabi Ul Awwal 1433 AH)

~ ~ ~

اللہ ہمارے لئے کافی ہے، اور اللہ ہمیں اپنے فضل عطاء کرے گا، ہم اللہ ہی کیلئے رغبت رکھتے ہیں

(کسی انصاری کو یہ خواب میں سید احمد الحسن ع سے سیکھا)

~ ~ ~

परमेश्वर हमारे लिए पर्याप्त है, वह शीघ्र ही अपनीं कृपा से हमें प्रदान करेंगे, हम परमेश्वर की अभिलाषा/ कामना करते हैं।

Sustenancesustenance
أفضل الذكر / Best of ways to remember Allah,

قال الإمام أحمد الحسن (ع):
[ وما علمته من الإمام المهدي (ع) أنّ أفضل الذكر هو قول: ((بسم الله الرحمن الرحيم ولا حول ولا قوة إلا بالله العلي العظيم اللهم صلِّ على محمد وآل محمد وسلم تسليماً)).
ومن قالها خمسين مرة لم يكتب من الغافلين في ذلك اليوم، وإن قالها مائة مرة كتب من الذاكرين في ذلك اليوم، وإن قالها ألف مرة كان من الفائزين عند الله وعند الإمام المهدي (ع) ].

المتشابهات ج3: من السؤال116

Original mahdyoon.org thread

~ ~ ~

Imam Ahmed Al Hasan (as) said:

What I learnt from Imam Mahdi (as) is that the best of things to say in remembrance of Allah is: (In the name of Allah the Abundantly Merciful, the Intensely Merciful and there is no strength nor power but with Allah, the Most High, the Mighty. Oh Allah, send blessings on Muhammad and the Family of Muhammad and send peace in abundance). Whoever says this fifty times will not be counted amongst the ignorant on that day and whoever says it one hundred times they will be counted on that day amongst those that remember (Allah), and whoever says it one thousand times they will be amongst the successful before Allah and before Imam Mahdi (as).

The Allegories: vol. 3, question 116.

~ ~ ~

امام احمد الحسن ع نے کہا:

جو میں نے امام مھدی ع سے سیکھا وہ یہ ہے کہ بہتر ذکر یہ ہے –

بِسْمِ اللهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيْمِ وَلَا حَوْلَ وَلَا قُوَّةَ إِلاَّ بِاللهِ الْعَلِيِّ الْعَظِيْمِ اَللَّهُمَّ صَلِّ عَلَى مْحَمَّدٍ وَآلِ مُحَمَّدٍ وَسَلِّمْ تَسْلِيْماً

ا ور جو اسے پچاس مرتبہ پڑھے وہ اس دن غافلین میں شمار نہیں ہوگا، اور جو اسے سو مرتبہ پڑھے تو اس دن ذاکرین میں شمار ہوگا، اور جو اسے ہزار مرتبہ پڑھے تو وہ اللہ اور امام مھدی ع کے ہاں فائزین میں سے شمار ہوگا۔

~ ~ ~

इमाम अहमद अल हसन (अ.स.) ने कहा:

मैंने इमाम महदी (अ.स.) से सीखा कि अल्लाह/परमेश्वर के स्मरण  में  कही जाने वाली सबसे अच्छी बात है: (अल्लाह/परमेश्वर  के नाम के साथ जो बहुतायत  से दयालु एवं अत्यंत दयालु है।  अल्लाह /परमेश्वर , जिसके अतिरिक्त  न ही अन्य कोई सामर्थ्य है न शक्ति है, सर्वोच्च एवं सर्वशक्तिमान है। हे परमात्मा/परमेश्वर , मुह़म्मद और मुह़म्मद के परिवार/वंश पर अपना आशीर्वाद भेज दे और बहुतायत में शांति भेज दे। )

जो भी इसे ५० बार कहे  उसकी गणना उस दिनअज्ञानियों में नहीं की जायेगी और जो भी इसे १०० बार कहे उसकी गणना उस दिन उनमें की जायेगी जो परमेश्वर का स्मरण करते हैं,  और जो भी इसे १००० बार कहे  वह उनमें से होगा जो परमेश्वर और इमाम महदी (अ.स.) के समक्ष सफल हुआ।

Rankahmed-al-hasan %d8%a3%d8%ad%d9%85%d8%af-%d8%a7%d9%84%d8%ad%d8%b3%d9%86rank
دعاء من خطبة الحج / supplication from Hajj Sermon,

اللهم لك الحمد والمنة اللهم إني لم أكن أدري ما الكتاب ولا الإيمان فعرفتني ، اللهم إني كنت ضالاً فهديتني ، اللهم إني كنت ضائعاً فأرشدتني ، اللهم إني كنت مريضاً فشفيتني ، اللهم إني كنت عُرياناً فكسوتني ، اللهم إني كنت جائعاً فأطعمتني ، اللهم إني كنت عُطشاناً فرويتني ، اللهم إني كنت عائلاً فأغنيتني ، اللهم إني كنت يتيماً فآويتني ، فلا طاقة لي على شكرك ، لأني لم أُصب خيراً قط إلا منك ، ولم يدفع عني أحدٌ سوءاً قط إلا أنت، فلك الحمد كما ينبغي لكرم وجهك ، وعز جلالك ، اللهم صلي على محمد وآل محمد وافتح مسامع قلبي لذكرك ، حتى أعي وحيك ، وأتبع أمرك ، وأجتنب نهيك ، اللهم صلي على محمد وآل محمد ولا تصرف عني وجهك ، ولا تمنعني فضلك ولا تحرمني عفوك واجعلني أوالي أوليائك وأعادي أعدائك ، و ارزقني الرهبة منك و الرغبة إليك والتسليم لأمرك والتصديق بكتابك وأتباع سنة نبيك ( ص ) ، اللهم اجعل مسيري عبرا ، وصمتي تفكرا ، وكلامي ذكرى، وأغفر لي الذنب العظيم وألحقني بآبائي الصالحين ولك الحمد أولاً وآخراً وظاهراً وباطناً ، اللهم وأبلغ سلامي إلى رسولك المؤيد المنصور المسدد الحاشر الناشر محمد ( ص ) وأعتذر وأستغفر وأتوب إليك وأليه من تقصيري في تبليغ الرسالة عن وليك وولده المظلوم محمد بن الحسن صلواتك عليه وعلى آبائه الطاهرين ، والسلام على المؤمنين والمؤمنات في مشارق الأرض ومغاربها ورحمة الله وبركاته.

~ ~ ~

Oh Allah, all the praise if for you and the kindness. Oh Allah, I did not know the book nor faith, but you taught me. Oh Allah, I was astray but you guided me. Oh Allah, I was lost but you directed me, Oh Allah, I was ill, but you cured me. Oh Allah, I was naked, but you clothed me. Oh Allah, I was hungry but you fed me. Oh Allah, I was thirsty but you watered me. OH Allah, I was destitute, but you made me independent. Oh Allah, I was an orphan but you gave me shelter.

So I have no strength to thank you, because I never received any good but from you, and non but you protected me from anyone.

So all thanks are yours as is appropriate for your kindness, and the might of your splendour.

Oh Allah, send blessings on Muhammad and the Family of Muhammad and give my heart the ability to hear your remembrance, until I hear your inspiration, follow your command, avoid what you have forbidden. Oh Allah send blessings on Muhammad and the Family of Muhammad and do not turn your Face away from me, do not block your blessings from me, do not stop me from obtaining your forgiveness. Make me befriend your friends, make me an enemy of your enemies, and bestow me with awe from you, and with desire for you, and to submit to your matter, and to affirm your book and to follow the tradition of your prophet (pbuhahf). Oh Allah, make my movement a sign, my silence thought, my speech remembrance. Forgive me the great sin, and join me with my pious ancestors. Yours is the praise in the beginning, at the end, openly, hidden. Oh Allah and convey my salutation to your messenger, the supported, the helped, the fortified, the gatherer, the spreader, Muhammad (pbuhahf), and I apologise and repent to you, and to him, because of my shortcomings in conveying the message from your guardian, and his wronged son, Muhammad b. Al Hasan, your blessings me on him and his pure forefathers. And peace be on the believing men and women in the east of the earth and the west, and mercy and blessings.

(Hajj Sermon)

~ ~ ~

اے اللہ تیرے لئے ہی تعریف ہے اور تیری طرف سے ہی عنایت ہے۔ اے اللہ میں کتاب اور ایمان نہیں جانتا تھا پھر تو نے مجھے آگاہ کیا۔  اے اللہ میں گمراہ تھا پھر تو نے مجھے ھدایت بخشی۔ اے اللہ میں گم ہو چکا تھا پھر تو نے مجھے راہ دکھائی۔ اے اللہ میں مریض تھا پھر تو نے مجھے شفاء دی۔ اے اللہ میں بے لباس تھا پھر تو نے مجھے لباس پہنایا۔ اے اللہ میں بھوکا تھا پھر تو نے مجھے کھلایا۔ اے اللہ میں پیاسا تھا پھر تو نے مجھے سیراب کردیا۔ اے اللہ میں بے سہارا تھا پھر تو نے مجھے غنی کیا۔ اے اللہ میں یتیم تھا پھر تو نے مجھے ٹھکانا دیا۔ تو تیرے شکر کا حق ادا کرنے کیلئے میرے پاس طاقت ہے نہیں، کیونکہ میرے پاس جو بھی خیر مجھ تک پہنچی وہ آپ سے ہی پہنچی۔ اور تیرے علاوہ کسی اور نے مجھ سے کبھی برائی نہیں ہٹائی۔ تو تیری تعریف اس طرح ہوجیسا کہ تیرے (چہرے کے کرم کے اور عزت جلال کے) لائق۔ اے اللہ محمد اور آل محمد پر درود بھیج اور میرا دل اپنے ذکر سے بھر دے، یہاں تک کہ میں تیرے وحی کو سنوں اور تیرا حکم کو بجالاؤں، اور تیری منع کئی ہوئی باتوں سے پرہیز کروں۔اے اللہ محمد اور آل محمد پر درود بھیج اور مجھے اپنے فضل سے ہٹانا مت اور مجھے تیری معافی سے محروم مت کرنا۔ اور مجھے تیرے اولیاء سے دوستی اور تیرے دشمنوں سے دشمنی کرنے والا بنا دے۔ اور مجھے اپنا خوف اور اپنی رغبت اور تیرا حکم کو بجالانے کی اور تیری کتاب کی تصدیق کرنے کی اور تیرے نبی ص کی سنت کی اتباع کی توفیق عطا کر۔ اے اللہ میرا چلنا عبرت بنادے اور میری خاموشی کو سوچ وبیچار کا موقعہ بنادے اور میری گفتگو کو ایک یاد دیہانی بنادے اور مجھے میرا سب سے بڑا گناہ معاف کردے (اپنے وجود کو ایک ‘ذنب عظیم’ کہتے ہیں) اور مجھے اپنے نیک آباء واجداد سے ملادے اور تیری ہی تمام تعریفیں ہیں سب سے پہلے اور سب سے آخر میں، ظاہری اور باطنی طور پر۔ اے اللہ اور میرا سلام تیرے پیغمبر محمد ص تک پہنچادے جو کہ سہارا دیا اور مدد کیا ہوا ہے، جو کہ حاشر اور ناشر ہے۔ اور میں معذرت خواہ ہوں اور استغفار کرتا ہوں اور تیرے ولی اور ان کے مظلوم بیٹے محمد بن الحسن (ان پر اور ان کے پاک آباء پر تیرا درود ہو) کے جانب تیرے پیغام پہنچانے میں اپنی کوتاہی سے تیری طرف اور ان (نبی محمد ص) کی طرف لوٹتا ہوں۔ اور تمام مؤمن مرد اور خواتین جو زمین کے مشرق اور مغرب میں بستے ہیں ان سب پر سلام ہو اور اللہ کی رحمت اور اس کے برکات ہوں۔

~ ~ ~

हे परमेश्वर,  समस्त प्रशंसा और आभार आपके लिए है। हे परमेश्वर, मैं ग्रंथ नहीं जानता था, न ही आस्था जानता था, किंतु आपने मुझे शिक्षित किया। हे परमेश्वर, मैं भटका हुआ था किंतु आपने मेरा मार्गदर्शन किया। हे परमेश्वर, मैं लुप्त हो (खो गया )था, किंतु आपने मुझे निर्देशित किया । हे परमेश्वर,मैं रोगग्रस्त था किंतु आपने मेरा उपचार किया। हे परमेश्वर  मैं नग्न था, किंतु आपने मुझे वेष्टित किया (ढक दिया) । हे परमेश्वर, मैं क्षुधित (भूखा) था, किंतु आपने मेरा पोषण किया (मुझे भोजन कराया) । हे परमेश्वर, मैं तृषित(प्यासा) था, किंतु आपने मेरा सिंचन किया (मुझे जल प्रदान किया) । हे परमेश्वर,मैं निःसहाय (बेसहारा)था,किंतु आपने मुझे स्वतंत्र बनाया। हे परमेश्वर, मैं अनाथ था आपने मुझे आश्रय प्रदान किया।

अतः मेरे पास आपको धन्यवाद देने के लिए कोई सामर्थ्य  नहीं है, क्योंकि आपके अतिरिक्त मैंने कहीं से कभी कोई  अच्छाई  प्राप्त नहीं की, और किसी ने भी नहीं अपितु  आपने ही मुझे किसी से बचाया है   ।

अत: समस्त धन्यवाद /आभार आपके ही हैं जैसा कि यह आपकी दयालुता एवं आपके वैभव की शक्ति के लिए उचित है ।  हे परमेश्वर, मुह़म्मद और मुह़म्मद के परिवार/वंश पर अपना आशीर्वाद भेज दें और  मेरे ह्रदय को आपका स्मरण  सुनने की क्षमता प्रदान करें जब तक कि मैं आपकी प्रेरणा सुन न लूँ ,आपकी आज्ञा का पालन न कर लूँ, अपने आप को उससे न रोक लूँ जो आपके द्वारा निषिद्ध किया गया है। हे परमेश्वर, मुह़म्मद और मुह़म्मद के परिवार/वंश पर अपना आशीर्वाद भेज दें और मुझ से अपना मुख न मोड़ें, मुझ पर से अपना आशीर्वाद न रोकें, मुझे आपकी क्षमा प्राप्त करने से न रोकें, मुझे अपने मित्रों का मित्र बना दें, मुझे अपने शत्रुओं का शत्रु बना दें और मुझे अपनी महिमा   के साथ , और आपके  लिए कामना करने के साथ, और आपके  विषय/मामले  के अधीन  होने के साथ, और आपके ग्रंथ की पुष्टि करने , और आपके पैग़म्बर( उन पर और उनके परिवार पर शांति हो) की परम्परा का पालन करने के आशीर्वाद के साथ सम्मानित करें। हे परमेश्वर, मेरी गतिविधि/चाल को एक संकेत बना दीजिये, मेरे मौन/चुप्पी को विचार, मेरे वक्तव्य को स्मरण बना दीजिये। मेरे महापाप को क्षमा कर दीजिए, और मुझे मेरे पवित्र/धर्मनिष्ठ पूर्वजों के साथ संयुक्त कर दीजिए ।

आदि में, अन्त में, प्रकट रुप में , अदृश्य रूप में आपकी ही प्रशंसा है। हे परमेश्वर, और मेरा अभिवादन अपने दूत / रसूल तक संप्रेषित कर दीजिए/पहुँचा दीजिए, जो कि  सहयोग प्राप्त, सहायता प्राप्त, दृढ़ता प्राप्त, संग्राहक, प्रसारक, मुहम्मद(उन पर और उनके परिवार पर शांति हो),

और मैं आपसे और उनसे, आपके संरक्षकों /अधिकारियों एवं उनके पीड़ित पुत्र,  मुह़म्मद बिन अल ह़सन (उन पर एवं उनके विशुद्ध पूर्वजों पर आपका आशीर्वाद हो) का संदेश संप्रेषित  कर पाने / पहुँचा पाने में असमर्थ होने के कारण उनसे क्षमा याचना करता हूँ एवं पश्चाताप करता हूँ ,

तथा पूर्व एवं पश्चिम में (सर्वत्र),आस्तिक स्त्रियों एवं आस्तिक पुरूषों पर शांति, कृपा और आशीर्वाद हो।

Forgivenessahmed-al-hasan %d8%a3%d8%ad%d9%85%d8%af-%d8%a7%d9%84%d8%ad%d8%b3%d9%86forgiveness
دعاء لكل أمراض / Supplication for all illnesses,

يا مَنِ اسْمُهُ دَوَاءٌ , وَ ذِكْرُهُ شِفَاءٌ , يا مَنْ يَجْعَلُ الشِّفَاءَ فِيْ مَا يَشَاءُ مِنَ الأَشْيَاءِ , صَلِّ عَلَى مُحَمَّدٍ وَ آلِ مُحَمَّدٍ وَ اجْعَلْ شِفَاَء (تذكر الاسم إن كان غيرك أو ياء متكلم أي تقول شِفَائِي) مِنْ هَذَا الدّاءِ بِاسْمِكَ هَذَا (يَا اللهُ عشر مرات) … (يَا رَبِّ عشر مرات) … (يَا أَرْحَمَ الرَّاحِمِيْن عشر مرات)

~ ~ ~

الجواب المنير عبر الأثير- الجزء السابع

Oh, He whose name is a medicine, and His remembrance is a cure, oh He who puts the cure in whatsoever He pleases , send Blessings on Muhammad and the Family of Muhammad , and grant the cure for (mention the person’s name if other than you, or say ‘my cure’) from illness, with this name of yours (Oh Allah x 10) … (Oh my Lord x 10) … (Oh most Merciful of the Merciful Ones x 10)

Al Jawab Al Muneer – vol. 7

~ ~ ~

 

Illnessahmed-al-hasan %d8%a3%d8%ad%d9%85%d8%af-%d8%a7%d9%84%d8%ad%d8%b3%d9%86illness
تَحَصَّنْتُ بِذِي الْمُلْكِ / I have sought safety,

تَحَصَّنْتُ بِذِي الْمُلْكِ وَالْمَلَكُوْتِ وَاعْتَصَمْتُ بِذِي الْقُدْرَةِ وَالْجَبَرُوْتِ وَاسْتَعَنْتُ بِذِي الْعِزَّةِ وَالْلَّاهُوْتِ مِنْ كُلِّ مِا أَخَافُ وَأَحْذَرُ

 وَبِمُحَمَّدٍ وَعَلِيٍّ وَفَاطِمَةَ وَالْحَسَنِ وَالْحُسَيْنِ وَعَلِيٍّ وَمُحَمَّدٍ وَجَعْفَرَ وَمُوْسَى وَعَلِيٍّ وَمُحَمَّدٍ وَعَلِيٍّ وَالْحَسَنِ وَمُحَمَّدٍ

وَالْحَمْدُ لِلَّهِ وَحْدَهُ

~ ~ ~

Tahassantu bi-dhil-mulki wa-l-malakoot, wa’tasamtu bi-dhi-l-qudrati wa-l-jabaroot, wa-sta’antu bi-dhi-l-izzatu wa-l-lahoot, min kulli ma akhaafu wa ahdhar wa bi-Muhammad wa Ali wa Fatimah wa-l-Hasan wa-l-Hussain wa Ali wa Muhammad wa Ja’far wa Ali wa Muhammad wa Ali wa-l-Hasan wa Muhammad

Wa-l hamdulillah wahdah

~ ~ ~

I have sought safety with the One of Dominion and the Heavenly Kingdom; I have sought protection in the One of Power and Omnipotence; I have sought help from the One of Might and Divinity from all that I fear and all that I am wary of and in Muhammad, Ali, Fatimah, Al Hasan, Hussain, Ali, Muhammad, Ja’far, Musa, Ali, Muhammad, Ali, Al Hasan and Muhammad.

And all the praise is only for Allah

Reference:مكتب السيد أحمد الحسن ع القسم العلمي

 

Protectionahmed-al-hasan %d8%a3%d8%ad%d9%85%d8%af-%d8%a7%d9%84%d8%ad%d8%b3%d9%86protection
Skip to toolbar